Feeds:
Posts
Comments

Posts Tagged ‘fitrat’

زندگی اورفطرت کا رشتہ

ایک  من چلا  خانہ بدوش

اپنے ہی دُھن میں مد ہوش

آبادیوں سے دُور

بےمنزل راستوں پہ

زماںومکاں کی قید سے بھیگا نہ

تہذیب کے سب بندھنوں سے نآشنا

جُون کی تپتی دوپہر میں

بےسروساماں

پیاس کی شدت سے ہونٹ خُشک لئے

چہرہ مُرجھایاہُوا

بال بکھرےہوے

وُہ اکیلا اوردُوردُورتک لمبی سُنسان سڑک

دُھوپ ، گرمی ، حَبس

قدم تیز ہوجاتے ہیں،لیکن

حدِ نگاہ تک آبادی،انسان،سایہ،پانی کا وجودنہیں ہے

ہَوا میں چیل منڈھلا رہےہیں

پیاس ، تھکاوٹ ، کمزوری

ؤہ سڑک کے کنارے

اکیلے ، لاوارث ، بے برگ درخت تلے

نڈھال ہو کر جا گرتا ہے

…………زندگی فطرت کی تلاش میں اپنا وجود کھو رہی ہے

 

ننگے درخت کے عین اُوپر

نیلے آسماں کی وسعتوں میں

اپنے قافلے سے بھٹکا ہُوا

بادل کا ایک آوارہ ٹکڑا

………اپنے بےمعنی وجود پہ مسکرا رہا ہے

 

…….فطرت حرکت میں آتی ہے

 

بادل کا ننھا ٹکڑا

دوسرے ٹکڑوں کو آواز دیتا ہے

چیختا ہے، چلاتا ہے، سب کوبلاتا ہے

ایک ایک کر کے سب آوارہ ٹکڑے آکر ملتے ہیں

سب ساتھہ جھومتے ہیں،گرجتے ہیں

درخت کے اُوپر سایہ آتا ہے

ٹھنڈی ہَوا چلنے لگتی ہے

گھن گرج کے بارش برستی ہے

پانی کی بُوندیں خانہ بدوش کےہونٹوں کوچومتی ہیں

زندگی آہستہ آہستہ پھر لوٹ آتی ہے

وہ آنکھیں کھولتاہے

اور خوشی سے برستی بارش میں جُھومنے لگتا ہے

زندگی جاگ اُٹھتی ہے

فطرت چھپ جاتی ہے

آنکھہ مچولی کا کھیل جاری رہتا ہے

Ek man chala khana badosh

Apne hi dhun main madhosh

Abadiyon se dur

Bay manzal raaston pe

Zamaan wa makaan ki qaid se bhegana

Tehzeeb k sub bandhano se na ashna

June ki tapti dopahr main

Bay sar wa samaan

Piyaas ki shidat se hont khushk liye

Chehra murjhaya hua

Baal bikhray hue

Wo akela aor dur dur lambi sunsaan sarak

Dhoop, garmi, habs

Qadam tez ho jathe hain laikin

Had e nigaah tak abaadi, insaan, saya, pani ka wajud nahi hai

Piyas, thakawat, kamzori

Wo sarak k kinaray

Akale, lawaris, bay berg drakht talay

Nidhaal ho ker ja girtha hai

Zindagi fitrat ki talash main apna wajud kho rahi hai….

Nange drakht k aen oper

Neele asman ki wusaton main

Apne qafle bhatka hua

Baadal ka ek awara tukra

Apnay bay maani wajud pe muskra raha hai……

Fitrat herkat main athi hai….

Badal ka nanha tukra

Dusre tukron ko awaz detha hai

Cheekhta hai, chilata hai, sub ko bulata hai

Ek ek ker k sub awara tukre aker milthe hain

Sub sath jhoomte hain, garajte hain

Drakht k oper saya ata hai

Thandi hawa chalni lagti hai

Ghan garaj k baarish barasti hai

Pani ki boonden khana badosh k honton ko choomti hain

Zindagi ahista ahista phir lot ati hai

Wo ankhen khilta hai

Aor khushi se barasti barish main jhoomne lagta hai

Zindagi jaag uthti hai

Fitrat chup jaati hai

Ankh macholi ka khel jari rehta hai





Read Full Post »